قاتل مچھلی نے بحیرہ روم کا رُخ کر لیا کلر فش کی لمبائی کتنی ہے اور اس میں خارج ہونے والا زہر کیسا ہے ؟ جانیے

5

قاتل مچھلی نے بحیرہ روم کا رُخ کر لیا کلر فش کی لمبائی کتنی ہے اور اس میں خارج ہونے والا زہر کیسا ہے ؟ جانیے

قاتل مچھلی نے بحیرہ روم کا رخ کرلیا،کلر فش کی لمبائی کتنی ہے اور اس میں سے خارج ہونیوالا زہر کیا تاثیر رکھتا ہے،جانئے قاتل مچھلی نے بحر روم کا رخ کر لیا

،کلر فش سے خارج ہونے والا زہر اپنی تاثیر میں “سائنائیڈ گیس” سے 1250 گنا زیادہ ہوتا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابقآئندہ موسم سرما میں یہ مچھلی بحر روم میں نمودار ہو گی۔ بحیرہ روم سے 8 عرب ممالک کے ساحل ملتے ہیں،

ان ممالک میں 22.5 کروڑ سے زیادہ افراد بستے ہیں اور ہر سال کروڑوں سیاح ان ممالک کا دورہ کرتے ہیں۔

قاتل مچھلی کی زیادہ سے زیادہ لمبائی 50 سینٹی میٹرہوتی ہے اور اس کا اصلی ٹھکانہ بحر ہند اور بحر الکاہل ہے۔

بحر روم میں پہلی مرتبہ یہ 2014 میں اٹلی میں نمودار ہوئی۔ اس کے ایک برس بعد مالٹا اور کروئیشیا میں دیکھی گئی اورپھر 2016 میں یونان کے جزیرے کریٹ میں ظاہر ہوئی۔

محققین کی توجہ حاصل کرنے کے بعد قاتل مچھلی کے بارے میں یہ بارے میں یہ انکشاف ہوا کہ یہ مصر اور اسرائیل میں بعض افراد کی ہلاکت کا سبب بنی۔


جانیے شاہ رخ اور گوری کے اس 200 کروڑ کے شاندار گھر میں کیا کیا ہے؟


برطانوی اخبار ٹائمز کے مطابق اس کو چھونے والا سنگین پیچیدگیوں کا شکار ہو کر اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھتا ہے، اِلا یہ کہ پکڑنے والا یہ جانتا ہو کہ اسے اپنا ہاتھ کہاں رکھنا ہے۔

قاتل مچھلی کے زہر اور خطرے کے سبب مصر میں اس کا شکار ، فروخت اور بازاروں میں لانا ممنوع ہے۔

اس وقت قاتل مچھلی بڑی تعداد میں نہر سوئز پہنچ کر مچھلیوں کے پسندیدہ دسترخوان کا رخ کر رہی ہے جہاں یورپی ممالک میں پناہ کے طالب درانداز ڈوب جانے کے بعد قاتل مچھلی کی خوراک بن جاتے ہیں۔

ترکی میں اس مچھلی کے حوالے سے احتیاطی تدابیر اختیار کی گئی ہیں جس کا وزن بعض مرتبہ 5 کلو گرام تک پہنچ جاتا ہے۔

toadfish

حکام نے ساحلی شہروں کی آبادی کو آگاہ کیا ہے کہ وہ ننگے ہاتھوں سے اسے نہ چھوئیں بلکہ پلاسٹک کے برتن کے ذریعے پانی سے نکالیں اور پھر کسی گہرے گڑھے میں دفن کر دیں۔

یورپی یونین نےبحر روم میں toadfish (قاتل مچھلی) کو پھیلنے سے روکنے کے لیے قریبا 3 لاکھ امریکی ڈالر کے مساوی رقم خرچ کی ہے۔

اس سلسلے میں فی کلو مچھلی کے عوض 4 ڈالر کی رقم ادا کی جا رہی ہے تا کہ مچھیروں کی اس کے شکار کے لیے حوصلہ افزائی کی جائے اور سمندر اس مچھلی اور اس کی آفت سے محفوظ رہے۔

اس مچھلی کو 1789 میں جرمن سائنس داںJohann Friedrich Gmelin نے دریافت کیا تھا۔ جوہان 1804 میں 56 برس کی عمر میں فوت ہو گیا۔

اس نے اس مچھلی کو سائنسی اصطلاح کے طور پرLagocephalus Sceleratus کا نام دیا تھا۔ تاہم عالمی سطح پر یہ مچھلی silver-cheeked toadfish کے انگریزی نام سے جانی جاتی ہے کیوں کہ اس کا رنگ چاندی جیسا ہوتا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.