چیمپئنز ٹرافی 2009ء کے دوران بغاوت کا ماسٹر مائنڈ شاہد آفریدی تھا: یونس خان

آفریدی، شعیب ملک، مصباح الحق اور محمد یوسف پیش پیش تھے، مجھے لگتا ہے یہ کپتانی حاصل کرنے کا معاملہ تھا: سابق کپتان

16

چیمپئنز ٹرافی 2009ء کے دوران بغاوت کا ماسٹر مائنڈ شاہد آفریدی تھا: یونس خان

آفریدی، شعیب ملک، مصباح الحق اور محمد یوسف پیش پیش تھے، مجھے لگتا ہے یہ کپتانی حاصل کرنے کا معاملہ تھا: سابق کپتان

لاہور سابق کپتان یونس خان نے 2009ء میں ساتھی کھلاڑیوں کی جانب سے بغاوت کا ماسٹر مائنڈ شاہد آفریدی کو قرار دے دیا۔ 43

سالہ یونس خان نے جنوبی افریقہ میں کھیلی گئی چیمپئنز ٹرافی 2009ء میں ساتھی کھلاڑیوں کی جانب سے اپنے خلاف بغاوت کا ماسٹر مائنڈ شاہد آفریدی کو قرار دیا،

اس وقت کے کھلاڑیوں نے یونس خان کی کپتانی میں نہ کھیلنے کا عزم کرتے ہوئے قرآن پاک پر حلف اٹھایا تھا، اس میں شاہد آفریدی، شعیب ملک، مصباح الحق اور محمد یوسف پیش پیش تھے۔

ایک انٹرویو میں یونس خان کا کہنا تھا کہ انہیں لگتا ہے کہ کھلاڑیوں کا یہ عمل کپتانی حاصل کرنے کا معاملہ تھا

شاہد آفریدی نے خود یہ مان لیا تھا کہ وہ ان کی شکایت لے کر اس وقت کے چیئرمین پی سی بی اعجاز بٹ کے پاس گئے تھے

آل راؤنڈر کراچی سے فلائٹ لے کر اسلام آباد گئے اور بات بھی کی تو شاید اس سب کے ماسٹر مائنڈ بھی وہی ہوں گے

معلوم نہیں کہ انھوں نے یہ بات کیوں کہی کہ انہیں شکایت تو ہے مگر یونس خان کو کپتانی سے نہیں ہٹانا چاہتے۔

بیٹی کی پیدائش کے بعد سے پرفارمنس بہتر ہوئی ہے : حسن علی

انھوں نے کہا کہ جس نے بھی بات کی اس کا یہی کہنا تھا کہ یونس خان سخت مزاج ہیں

کرکٹرز ان کی کپتانی میں کھیلنا نہیں چاہتے، کسی نے خود یہ نہیں کہا کہ وہ کھیلنے کو تیار نہیں بلکہ سب دوسروں کی بات کرتے رہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.